جدیدیت کے بعد ایک نئی اصطلاح ‘‘مابعد جدیدیت’’ کے نام سے منظرِ عام پر آئی۔ اس کا آغاز بھی مغرب سے ہوا اور پھر رفتہ رفتہ ساری دنیا میں آشنائی حاصل کر لی۔ یہ ایک ایسی اصطلاح ہے جس میں بے شمار فطری روّیے عیاں اور پوشیدہ ہیں جن کے معرضِ وجود میں آنے کے […]

مزید پڑھیں

ادب، زندگی اور کائنات سے متعلق تمام مباحث جدیدیت اور مابعد جدیدیت کا ایک واضح حوالہ ہیں۔ جس کے باعث انسانی فکر اور اس کی داخلی توانائیوں کو نئے حوالوں، نئے عنوانات و موضوعات کی سطح پر نئی تفہیم سے روشناس کروایا گیا۔ اس کے پس منظر میں مغربی معاشرے کی مادہ پرستی اور خود […]

مزید پڑھیں

یہ مضمون مابعدجدیدیت،  ترقی پسندی  اور نو مارکسیت  کے  درمیان تعلق کا تجزیہ کرنے کی سعی ہے۔مقالہ نگار کا خیال ہے کہ اردو میں مابعد جدیدیت پر اعتراضات ایک طرف مذہب ؍روایت پسندوں نے کیے ہیں اور دوسری طرف ترقی پسندوں نے۔ روایت پسندوں کا مفروضہ ہے کہ مابعد جدیدیت، کا اصل ایجنڈا ادبی نہیں،مذہب […]

مزید پڑھیں

پس جدیدیت ڈسکورس بنیادی طور پر فرانس، برطانیہ اور امریکہ سے درآمدہ فکر ہے۔ اُردو ناقدین اور اسکالرز نے اس کے حوالے سے زیادہ تر تعارفی اور وضاحتی نوعیت کے مضامین لکھے ہیں۔ اگرچہ ڈاکٹر محمد علی صدیقی اور عمران شاہد بھنڈر جیسے بعض مصنفین نے اس ڈسکورس سے سیر حاصل بحث کی ہے لیکن […]

مزید پڑھیں

عصر حاضر میں تھیوری کے مباحث بیان کرنے میں ناصر عباس نیر کا بہت بڑا ہاتھ ہے۔ ان کا تنقیدی سفر ساختیات، پس ساختیات سے مابعد نوآبادیاتی تنقید تک چلا آ رہا ہے۔ انھوں نے مغربی ناقدین سے استفادہ ضرور کیا ہے لیکن تقلید نہیں کی۔ معاصر تنقیدی مباحث کی اصطلاحات مشکل ضرور ہیں مگر […]

مزید پڑھیں