مقالہ نگار: یوسف، محمد سرریلزم اور جدید اردو شاعری میں اس کے خدوخال

خیابان : مجلہ
NA : جلد
35 : شمارہ
2016 : تاریخ اشاعت
شعبۂ اردو، جامعہ پشاور، پشاور : ناشر
بادشاہ منیر بخاری : مدير
NA : نايب مدير
Visitors have accessed this post 7 times.

۱۹۱۴ء میں فرانسیسی شاعری میں ڈاڈا ازم کا نظریہ اور تحریک وجود میں آئی جو انفرادی خود نمائی اور خود پسندی کے جذبے سے پیدا ہوئی تھی۔ چوں کہ یہ ہر چیز سے بغاوت کی حامل تھی اس لیے بہت سے فرانسیسی شعرا نے اس سے الگ ہو کر سرریلزم کا آغاز کیا جس نے عالمی ادب پر اپنے اثرات مرتب کیے لیکن جہاں تک اردو شاعری کا تعلق ہے اس میں سرریلزم سے متعلق رجحانات کسی ایک شاعر کے ہاں نہیں ملتے البتہ کچھ شاعروں کے ہاں اس کی جھلکیاں دکھائی دیتی ہیں جن میں افتخار جالب، جیلانی کامران، انیس ناگی، سلیم الرحمٰن، زاہد ڈار، احمد مشتاق اور منیر نیازی کے نام لیے جا سکتے ہیں۔ زیرِنظر مقالے میں انھی شعرا کے حوالے سے اردو شاعری میں سرریلزم کے خدوخال تلاش کرنے کی سعی کی گئی ہے۔