مقالہ نگار: جاوید، ساجد ساحر لدھیانوی کی نظم گوئی کا مابعد نوآبادیاتی مطالعہ

جرنل آف ریسرچ : مجلہ
NA : جلد
NA : شمارہ
2016 : تاریخ اشاعت
شعبۂ اردو، بہاء الدین زکریا یونی ورسٹی، ملتان : ناشر
قاضی عبد الرحمٰن عابد : مدير
NA : نايب مدير
Visitors have accessed this post 3 times.

نوآبادیاتی عہد میں ساحر لدھیانوی نے انسان دوستی کے منشور پر اپنی شاعری کے موضوعات کی بنیاد مستحکم کی۔ عام طور پر ادیبوں نے ۱۸۵۷ء کے بعد کے زمانے میں ہونے والے ظلم و ستم کے واقعات و شواہد کو موضوع بنایا۔ مگر ساحر نے انگریز آمد سے قبل، مغل عہد میں بھی مغل حکمرانوں کے جبر و استبداد اور استحصال کی طرف طنزیہ نگاہ کی۔ ساحر کے ہاں ایک بغاوت کا جذبہ عام دکھائی دیتا ہے۔ ساحر کا یہی جذبہ اس کی مضبوط فکر، فن اور ترقی پسندانہ جرأت کا اساس ہے۔ ساحر کی شاعری کو مزاحمتی اردو شاعری کے ساتھ ساتھ ردنوآبادیاتی رجحان کے طور پر نمایاں مقام حاصل ہے۔